ahmad faraz ghazal hum charaghoon ko

0
37

ahmad faraz ghazal

ہم چراغوں کوتوتاریکی سے لڑناہے فرازؔ
گل ہوئے پر صبح کے آثاربن جائیں گے ہم۔

ahmad faraz ghazal hum charaghoon ko
ahmad faraz ghazal hum charaghoon ko

تمام عمر اسی کے خیال میں گزری فرازؔ
میراخیال جسے عمر بھر نہیںآیا۔

کسی سے جُداہونا اگر اتناآسان ہوتا فرازؔ
تو جسم سے رُوح کو لینے کبھی فرشتے نہیں آتے۔

 میرے مرنے پر سب خوش ہوں گے فرازؔ
بس اک تنہائی روئے گی کہ میرا ہمسفر چل بسا۔

دل منافق تھا، شب ہجرمیں سویاکیسے
اور جب تجھ سے ملا، ٹوٹ کے رویاکیسے۔

 اس شخص سے فقط اتناساتعلق ہے فرازؔ
وہ پریشان ہوتو ہمیں نیندنہیں آتی ۔

 اس نے مجھے چھوڑدیاتوکیاہوافرازؔ
میں نے بھی توچھوڑاتھا سارا زمانہ اس کے لیے۔

یونہی موسم کی ادا دیکھ کے یاد آیاہے
کس قدر جلدبدل جاتے ہیں انسان جاناں۔

hum charaghoon ko tariki se larna hain faraz
Gul hue par subah ke آثاربن jayen ge hum .

tamam Umar isi ke khayaal mein guzri faraz
mirakhyal jisay Umar bhar نہیںآیا .

kise se juda hona agar itna asan hota faraz
to jism se rooh ko lainay kabhi farishtay nahi atay .

meray marnay par sab khush hon ge faraz
bas ik tanhai roye gi ke mera hamsafar chal basa .

dil munafiq tha, shab bajar main soya kaise
aur jab tujh se mila, toot ke roya kasi .

is  shakhs se faqat itna sa taluq hai farz
woh pareshan hoto hamein neend nahi aati .

es ne mujhe chor diya howa faraz
mein ne bhi tuh chorta sara zamana is ke liye .

yuunhi mausam ki ada dekh ke yaad aayahe
kis qader jald badel jatay hain ensaan janaan .

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here