dil ke behlane ko ghalib ghazal in urdu

dil ke behlane ko ghalib ghazal in urdu

حُسْن ماہ گارچی با-حانجاام کمال اچھا ہے
اُس سے میرا ماہ خورشید جمال اچھا ہے

بوسہ دیتے نہیں اور دِل پہ ہے ہر لیحزا نگاہ
جی میں کہتے ہیں کی مفت ہاتھ آئے تو مال اچھا ہے

اور بازار سے لے آئے اگر ٹوٹ گیا
ساگر جام سے میرا جام سفال اچھا ہے

بے طلب دیں تو مزہ اس میں سوا ملتا ہے
وہ گدا جس میں نا ہو خو سوال اچھا ہے

ان کے دیکھے سے جو آتی ہے منه پر رونق
وہ سمجھتے ہیں کی بیمار کا حال اچھا ہے

دیکھیے پاتے ہیں وششااق بتوں سے کیا فیض
اک بارحیمان نے کہاں ہے یہ سال اچھا ہے

ہم سخن تش نے فرہاد کو شیریں سے کیا
جس طرح کا بھی کسی میں ہو کمال اچھا ہے

قطرا دریا میں جو مل جا ئیں تو دریا ہو جائے
کام اچھا ہے جو جسکا ماں ’ آل اچھا ہے

خضر سلطان کو راخخی خالق اکبر سَر سبز
شاہ كے باگ میں یہ تازہ نہال اچھا ہے

ہم کو معلوم ہے جنت کی حقیقت ، لیکن
دِل کو خوش رکھنے کو غالب یہ خیال اچھا ہے

Mirza ghalib Shayari

husn mah garche با-حانجاام kamaal acha hai
uss se mera mah Khurshid jamal acha hai

bosa dete nahi aur dil pay hai har لیحزا nigah
jee mein kehte hain ki muft haath aeye to maal acha hai

aur bazaar se le aeye agar toot gaya
sagr jaam se mera jaam sifaal acha hai

be talabb den to maza is mein siwa milta hai
woh gadda jis mein na ho khoo sawal acha hai

un ke dekhe se jo aati hai munh par ronaqe
woh samajte hain ki bemaar ka haal acha hai

dekhieye paate hain وششااق buton se kya Faiz
ik بارحیمان ney kahan hai yeh saal acha hai

hum sukhan teshe ney farhaad ko sheree se kya
jis terhan ka bhi kisi mein ho kamaal acha hai

qatraa darya mein jo mil ja yin to darya ho jaye
kaam acha hai jo jiska maa’ all acha hai

khizar Sultan ko راخخی khaaliq akbar sar sabz
Shah ﻛﮯ baag mein yeh taaza nihaal acha hai

hum ko maloom hai jannat ki haqeeqat, lekin
dil ko khush rakhnay ko ghalib yeh khayaal acha hai

Leave a Comment