Dondogay Mulko Mulko Sad urdu ghazal

ڈھونڈوگے اگر ملکوں ملکوں ۔

ملنے کے نہیں نایاب ہیں ہم-

تعبیر ہے جس کی حسرت و غم ۔

اے ہم نفسو وہ خواب ہیں ہم-

میں حیرت و حسرت کا مارا خاموش کھڑا ہوں ساحل پر-

دریائے محبت کہتا ہے آ کچھ بھی نہیں پایاب ہیں ہم-

اے درد بتا کچھ تو ہی پتہ ۔

اب تک یہ معمہ حل نہ ہوا-

ہم میں ہے دل بے تاب نہاں یا آپ دل بےتاب ہیں ہم-

لاکھوں ہی مسافر چلتے ہیں، منزل پہ پہنچتے ہیں دو ایک-

اے اہل زمانہ قدر کرو نایاب نہ ہوں کمیاب ہیں ہم-

مرغان قفس کو پھولوں نے اے شاد یہ کہلا بھیجا ہے-

آجاو! جو تم کو آنا ہو ایسے میں ابھی شاداب ہیں ہم

Dondo gay  agar mulkon mulkon .

milnay ke nahi nayaab hain ہم-

tabeer hai jis ki hasrat o gham .

ae hum nafso woh khawab hain hum-

mein herat o hasrat ka mara khamosh khara hon saahil pr-

dareaye mohabbat kehta hai aa kuch bhi nahi payaab hain hum-

ae dard bta kuch to hi pata .

ab taq yeh moamma hal nah hua

hum mein hai dil be taab nihaan ya aap dil be taab hain hum-

lakhoon hi musafir chaltay hain, manzil pay pahunchte hain do aik

ae ahal zamana qader karo nayaab nah hon kamyaab hain hum-

marghan qafas ko phoolon ny ae shaad yeh kehla bheja hai thisishypenhere

ajawo! jo tum ko aana ho aisay mein abhi shadaab hain hum

Leave a Comment