allama iqbal quotes iqbal poetry

0
17

iqbal poetry

allama iqbal poetry in urdu
allama iqbal poetry in urdu

 عذاب دانش حاضر سے با خبر ہوں میں
کہ میں اس آگ میں ڈالا گیا ہوں مثل خلیل

 عروج آدم خاکی سے انجم سہمے جاتے ہیں
کہ یہ ٹوٹا ہوا تارا مہ کامل نہ بن جائے

 تری انتہا عشق مری انتہا
تو بھی ابھی نا تمام میں بھی ابھی نا تمام

 عقابی روح جب بیدار ہوتی ہے جوانوں میں
نظر آتی ہے ان کو اپنی منزل آسمانوں میں

 عقل کو تنقید سے فرصت نہیں
عشق پر اعمال کی بنیاد رکھ

 عمل سے زندگی بنتی ہے جنت بھی جہنم بھی
یہ خاکی اپنی فطرت میں نہ نوری ہے نہ ناری ہے

 غلامی میں نہ کام آتی ہیں شمشیریں نہ تدبیریں
جو ہو ذوق یقیں پیدا تو کٹ جاتی ہیں زنجیریں

ghazab Danish haazir se ba khabar hon mein
ke mein is aag mein dala gaya hon misl khalil

urij aadam khaki se Anjum shme jatay hain
ke yeh toota sun-hwa taara Meh kaamil nah ban jaye

tre intahaa ishhq meri intahaa
to bhi abhi na tamam mein bhi abhi na tamam

aqabi rooh jab beedar hoti hai jawanu mein
nazar aati hai un ko apni manzil asmano mein

aqal ko tanqeed se fursat nahi
ishhq par aamaal ki bunyaad rakh

amal se zindagi banti hai jannat bhi jahannum bhi
yeh khaki apni fitrat mein nah noori hai nah naari hai

ghlami mein nah kaam aati hain شمشیریں nah tadbeerye
jo ho zouq yaqeen peda to kat jati hain zanjeeren

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here