Nigaha ishaq ka allama iqbal urdu ghazal

Nigaha ishaq ka allama iqbal urdu ghazal

 

Nigaha ishaq ka allama iqbal urdu ghazal
Nigaha ishaq ka allama iqbal urdu ghazal

نگاہ فقر میں شان سکندری کیا ہے-

خراج کی جو گدا ہو ، وہ قیصری کیا ہے-

بتوں سے تجھ کو امیدیں ، خدا سے نومیدی-

مجھے بتا تو سہی اور کافری کیا ہے-

فلک نے ان کو عطا کی ہے خواجگی کہ جنھیں-

خبر نہیں روش بندہ پروری کیا ہے-

فقط نگاہ سے ہوتا ہے فیصلہ دل کا-

نہ ہو نگاہ میں شوخی تو دلبری کیا ہے-

اسی خطا سے عتاب ملوک ہے مجھ پر-

کہ جانتا ہوں مآل سکندری کیا ہے-

کسے نہیں ہے تمنائے سروری ، لیکن-

خودی کی موت ہو جس میں وہ سروری کیا ہے-

خوش آ گئی ہے جہاں کو قلندری میری-

وگرنہ شعر مرا کیا ہے ، شاعری کیا ہے

اس راز کو اک مرد فرنگي نے کيا فاش-

ہر چند کہ دانا اسے کھولا نہيں کرتے-

جمہوريت اک طرز حکومت ہے کہ جس ميں-

بندوں کو گنا کرتے ہيں ، تولا نہيں کرتے

 

nigah faqer mein shaan sikandari kya hai thisishypenhere

kharaaj ki jo gadda ho, woh Qaisery kya hai thisishypenhere

buton se tujh ko umeeden, kkhuda se nomaidi

mujhe bta to sahi aur kaafri kya hai thisishypenhere

fallak ney un ko ataa ki hai khwajgi ke jnhay-

khabar nahi rawish bandah parwari kya hai thisishypenhere

faqat nigah se hota hai faisla dil ka-

nah ho nigah mein shokhi to dilbari kya hai thisishypenhere

isi khata se Atab maloq hai mujh pr-

ke jaanta hon mall sikandari kya hai thisishypenhere

kisay nahi hai tamnnaye saroori, lakin-

khudi ki mout ho jis mein woh saroori kya hai thisishypenhere

khush aa gayi hai jahan ko qlndri mere-

wagerna shair mra kya hai, shairi kya hai

is raaz ko ik mard farangi ney kya pash-

har chand ke Dana usay khoola nahi karte thisishypenhere

jamhoriat ik tarz hukoomat hai ke jis min-

bundon ko gina karte hain, tola nahi karte

Leave a Comment