Parveen shakir – Parveen shakir New 2020 Poetry

Parveen shakir

Parveen shakir - Parveen shakir New 2020 Poetry

Baat vo aadhi raat ki raat vo puure chand ki, Chand bhi ain chait ka us pe tira jamal bhi

Bas ye hua ki us ne takalluf se baat ki, Or ham ne rote rote dupaTTe bhigo liye

raa.e pahle se bana li tu ne, dil men ab ham tire ghar kya karte

jis ja makin banne ke dekhe the main ne khvab, us ghar men ek shaam ki mehman bhi na thi

Mere chehre pe ghazal likhti gaein, Sher kahti hui ankhen us ki

Wo na aa.ega hamen ma.alum tha is shaam bhi, Intizar us ka magar kuchh soch kar karte rahe

Isi men khush huun mira dukh koi to sahta hai, Chali chalungi jahan tak ye saath rahta hai

Itne Ghane Badal Ke Peche, Kitna Tanha Ho Ga Chand

 دیل عجب شہر کی جس پر بھی کھلا دَر اِس کا ، وہ مسافر اسے ہر سمت سے برباد کرے

 باات وہ آدھی رات کی رات وہ پوری چند کی ، چند بھی عین چایت کا اس پہ تیرا جمال بھی

 باس یہ ہوا کی اس نے تکلف سے بات کی ، اور ہَم نے روٹ روٹ دوپاتتی بھگو لیے

 را . پہلے سے بنا لی تو نے ، دِل میں اب ہَم ٹائر گھر کیا کرتے

 جیس جا مكین بننے كے دیکھے تھے میں نے خواب ، اس گھر میں اک شام کی مہمان بھی نا تھی

میرے چہرے پہ غزل لکھتی گائیں ، شیر کہتی ہوئی آنکھیں اس کی

 وو نا آ . یجا ہمیں ماں . الم تھا اِس شام بھی ، انتظار اس کا مگر کچھ سوچ کر کرتے رہے

 یسی میں خوش ہوں میرا دکھ کوئی تو ساحتا ہے ، چلی Cحالونجی جہاں تک یہ ساتھ رہتا ہے

 یتنی گھنے بَدَل كے پیچھے ، کتنا تنہا ہو گا چند

Leave a Comment